22 مئی یومِ تاسیس و روزِ تجدیدِ عہد آئی ایس او پاکستان تحریر محمد وقاص ہادی فیصل آباد

0
40

22 مئی یومِ تاسیس و روزِ تجدیدِ عہد آئی ایس او پاکستان

تحریر محمد وقاص ہادی فیصل آباد
عزیز دوستو!
تنظیم کے امور میں سلسلہ قائم رکھو،اگر کہیں بھی یہ سلسلہ منقطع ہوا تو آپ دوستوں کو بروزِ محشر جواب دینا ہوگا۔

سفیر انقلاب،بانی آئی ایس او،شہید ڈاکٹر سید محمد علی نقویؒ

ہم کل بھی سرِ دار،صداقت کے امیں تھے
ہم آج بھی انکار حقیقت نا کریں گے

٢٢مئی ١٩٧٢ء کو جس تحریک کا آغاز ہوا تھا آج الحمد اللہ اس کی تیسری نسل جوان ہو چکی ہے۔ہر سال لاکھوں طلبہ و طالبات اس تحریک سے وابستہ ہوتے ہیں اپنی فکری و روحانی تربیت کرتے ہیں اور معاشرے کی تعمیر میں اپنا کردار ادا کرتے ہیں۔یہ سلسلہ جاری ہے اور انشاء اللہ جاری رہے گا۔
آئی ایس او پاکستان ایک شجر سایہ دار کی طرح ملت کے جوانوں کو عملی و روحانی قیادت فراہم کر رہی ہے۔تربیتی و تعلیمی پروگرام مسلسل جاری و ساری ہیں، ایک نسل نکل رہی ہے تو دوسری نسل انکی جگہ لے رہی ہے۔

اس47 سال کے طویل سفر میں آئی ایس او پاکستان کو بیشمار مشکلات کا سامنا کرنا پڑا، وقت گزرنے کے ساتھ جہاں کام میں اضافہ ہوتا گیا وہیں دشمنی بھی بڑھتی گئی،اور ان جوانوں کے پائے استقامت میں لغزش تک نہیں آئی ۔یہاں تک کہ اس الہٰی تنظیم کے بانی اور وطن عزیز میں ملت جعفریہ کے سیاسی، تعلیمی اور نظریاتی اساس کے مفکر ڈاکٹر سید محمد علی نقویؒ کو بھی امریکہ نے اپنے ایجنٹوں کے ذریعے شہید کروا دیا۔ڈاکٹر سید محمد علی نقویؒ قتل کر دیے گئے لیکن ان کی فکر قتل نہیں ہوئی۔آئی ایس او پاکستان کے کارکن ہوں یا عہدہ دار سب نے صبر و استقامت اور شجاعت کے وہ جوہر دکھائے کہ اپنے اور غیر سب حیران رہ گئے۔ ۔آج بھی شہید کے نظریاتی فرزندان ملک کے طول و ارض میں تعلیمات قرآن و سیرت محمد و آل محمد علیہم السلام کی ترویج کے لیے کوشاں ہیں۔اور نہضتِ امام زماں عجل اللہ فرجہ الشریف کے لیے زمینہ سازی میں مصروفِ عمل ہیں۔

آج آئی ایس او پاکستان کا شمار فقط ایک طلبہ تنظیم میں نہیں بلکہ عالمی اسلامی تحریکوں میں ہوتا ہے۔دنیا کی تمام انقلابی، اسلامی تحریکیں آئی ایس او پاکستان سے واقف ہیں اور اسے پاکستان میں استعماری سازش کے خلاف نبردآزما جوانوں کی ایک تحریک کے طور پر پیش کرتی ہیں۔اور سب کچھ کارکنوں کی محنت اور علماء و دانشور حضرات کی سرپرستی کی بدولت ہے۔

ملت کے علماء،زعماء،دانشوروں، اساتذہ،اہل فکر و نظر حضرات اور بالخصوص طلباء سے گزارش ہے کہ جوانوں کی اس تحریک کے ساتھ تعاون کریں،آپ کی معمولی سی حوصلہ افزائی ان جوانوں کو مزید فعال بنا سکتی ہے۔
آج کے دن ہم تجدید عہد کرتے ہیں کہ اس نعمت عظمی اور شہداء کی امانت کو بلا کم و کاست اپنی آنے والی نسلوں تک پہنچائیں گے تاکہ کسی حد تک ان شہداء کے مقدس خون کا حق ادا ہوسکے جنہوں نے اس شجرہ طیبہ کی آبیاری اپنے خون سے کی تاکہ آنے والی نسل کو حقیقی معنوں میں اس نعمت عظمی کا ادراک ہو سکے۔
خداوند متعال کے حضور دعا گو ہیں کہ اس کاروان الہیہ اور شجرہ طیبہ کو ظہور امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف تک سلامت رکھے اور نہضتِ امام زماں عج کے لیے خاطر خواہ خدمات سرانجام دینے کی توفیق عطا فرمائے۔(آمین بحق محمد و آل محمد)

زندہ یہ بیداری رہے
یہ سلسلہ جاری رہے
ہم ہوں نا ہوں اس بزم میں
قائم عزاداری رہے۔۔۔
قائم عزاداری رہے۔۔۔
قائم عزاداری رہے۔۔۔۔