اسرائیل کی فلسطین پر دہشت گردی. تحریر:عنصر زمانی

0
146

اسرائیل کی فلسطین پر دہشت گردی.
تحریر:عنصر زمانی
جو درد ناک حال فلسطین کے اندر ہو رہا ہے. غزہ پر جس طرح سے اسرائیل دہشت گردی کر رہا ہےاب بلکل نظر آرہا ہے کہ غزہ کی پٹی اور یہ تمام چیزیں فلسطین کے ہاتھ سے نکلتی نظر آرہی ہیں اور پوری دنیا اس درد ناک حالت کو بڑی خاموشی سے اور چوہدری بن کر دیکھ رہی ہے اور کوئی کچھ کرنے نہیں جارہا.
اور پوری دنیا اس طرح کرتی رہی تو ہم اپنی آنکھوں کے سامنے فلسطین کو اپنے ہاتھوں سے نکال دیں گے اور ہم جتنی مرضی دعائیں کر لے ان کا فائدہ اس وقت تک نہیں ہو گا اور اس حال میں ہماری دعائیں فضول ہیں جب تک ہم فلسطین کے مسلمانوں کا ساتھ نہیں دیں گے.

پیر کی ساری رات جو خون خار مناظر, جو قیامت خیز مناظر ساری دنیا نے دیکھیں اور اس بار تو انتہا ہو گئی کہ اسرائیل براہ راست سب کچھ شوشل میڈیا پر نشر کرتا رہا اور حماس کے ہیڈ کواٹر کو بھی اڑا دیا گیا اس پر فلسطین لیڈر نے بیان بھی دیا کہ اگر خاس طور پر عرب ممالک جو اپنے اسلے کو سانپ کی طرح دبائے ہوئے ہیں یہ ہمیں اس اسلے کا پچاس فیصد (%50) ہی دے دیں اور اس کے بعد ہم اسرائیل کا وہ ہال کرے گے کہ پوری دنیا کے مسلمان نماز جمعہ قبلہ اول میں آکر ادا کرے گے.
میں یہاں یہ کہنا برا نہ سمجھو گا کہ اگر عرب ممالک نے فلسطین کا ساتھ نہ دیا اس مشکل وقت میں تو آج فلسطین پر جو قیامت خیز مناظر بے لگام ٹوٹے ہوئے ہیں تو عین کل عرب ممالک کی باری بھی آنے والی ہیں جو چوہدری بن کر بیٹھے ہوئے ہیں اور بڑے مزے کے ساتھ خاموش ہیں.

فلسطین کی اس مشکل ترین گھڑی اور قیامت خیز مناظر کے موقع پر صرف اور صرف ایک حزب اللہ ہی فلسطین کے ساتھ کھڑی ہے اور اس کے لیڈر حسن نصراللہ نے حماس میں فلسطین کے لیڈر سے ملاقات کی اور فلسطین کا ساتھ دینے کا اعلان کیا اور اسرائیل کو منہ توڑ بیان بھی دیا ہے کہ اپنی دجال کی سی حرکتوں سے باز آجاؤ نہیں تو بہت برا ہو گا جس کا تجھے علم نہیں ہے.
ہم سب کو اندازہ ہو گیا ہوگا کہ اس حالت میں واحد حزب اللہ ہی فلسطین کے مسمانوں کے ساتھ کھڑی ہے اور عرب ممالک اپنی غلط فہمی نکال دیں کہ دجال کا اگلا ٹارگٹ عرب ممالک ہی ہیں.
اور آپ اندازہ کرے کہ جو غزہ کے اندر یہ ظلم ہوا ہے کہ آپ کو کسی مسلم حکمران نے بتایا؟؟؟ اور صرف چھوٹا موٹا بیان اور ایک آدھی خبر کسی نے دیں بھی دی تو سمجھ لیا کہ ہمارا کام ہو گیا بس.
ہم اگر یمن کی طرف دیکھیں تو جو آگ یمن میں لگی ہوئی ہے تو کیا یہ آگ کی اگلی باری کوئی اور عرب ملک نہیں بن سگتا؟؟

اور اگر سب تیار ہو جائے تو اسرائیل کی بربادی ممکن ہے اور ہم سب کے سامنے افغانستان کی مثال ہے کہ امریکہ اور اسرائیل کی قمر ٹوٹ گئی ہے.
اور یہ سب اس وقت ہی جاگے گے کہ جب فلسطین ہاتھ سے نکل جائے گا کہ جس طرح اسرائیل نے آہستہ آہستہ قبضہ کیا اور اب غزہ کی پٹی بھی ہاتھ سے نکل رہی ہے اور اس کی وجہ عرب ممالک ہی ہیں کہ جنہوں نے ابھی تک کسی قسم کا ساتھ نہیں دیا اور تماشا دیکھ رہیے ہیں اور کل یہی حال ان کا بھی ہو گا جو فلسطین اور یمن کا ہے.