دہشتگردی بین الاقوامی مسئلہ ، خاتمہ کےلئے تمام ممالک کو عملی اقدامات اٹھانا ہو نگے علامہ ساجد علی نقوی

0
166

دہشتگردی بین الاقوامی مسئلہ ، خاتمہ کےلئے تمام ممالک کو عملی اقدامات اٹھانا ہو نگے علامہ ساجد علی نقوی
اسلام آباد ( سلطان نیوز)نیوزی لینڈ کی ریاست کو چاہیے کہ وہ مسجد پر حملہ آوروں کو گرفتار کرے، مساجد اوربسنے والے مسلمانوں کی حفاظت کو بھی یقینی بنا ئے، قائد ملت جعفریہ نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی مساجد میں ہونے والی دہشتگردی انتہائی افسوس ناک ہے ، حملے کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے۔ قائد ملت جعفریہ پاکستا ن علامہ سید ساجد علی نقوی کا کہنا ہے کہ نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی مساجد میں ہونے والے دہشتگردی انتہائی افسوس ناک ہے ، اس دہشتگردانہ حملے کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ علامہ ساجد نقوی کا مزیدکہنا تھاکہ دہشتگردوں کا کوئی دین و مذہب نہیں ہوتا دہشتگرد انسانیت کے دشمن ہیں جنہوں نے آج نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی النور اور لین وڈ مسجد میں نمازیوں کو نشانہ بناتے ہوئے ان پر اندھا دھند فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں اب تک 40 سے زائد افراد کی شہادت کی اطلاعات ہیں۔قائدملت جعفریہ علامہ ساجد نقوی نے نیوزی لینڈ میںدومساجدحملہ میں قیمتی جانی ضیاع پر افسوس کا اظہارکرتے ہوئے کہا کہ نیوزی لینڈ کی ریاست کو چاہیے کہ وہ مساجد پر حملہ آوروں کو گرفتار کرئے اور قانون کے کٹہرے میں لاکر سخت سزادینے کےساتھ ساتھ نیوزی لینڈ میں قائم مساجد اور وہاں پر بسنے والے مسلمانوں کی حفاظت کو بھی یقینی بنا ئے۔انہوںنے کہا کہ پاکستان سمیت دیگر اسلامی وغیر اسلامی ممالک عرصہ دراز سے دہشتگردی کا سامنا اورمقابلہ کرتے چلے آرہے ہیں۔اور پاکستان بھی عرصہ دراز سے دہشتگردی کا شکار ہے اور ہم نے ہمیشہ ہر سطح پر ہرقسم کی دہشتگردی کی نفی کی ہے اور اس کے خاتمہ کیلئے اور ملک میںپر امن فضاءقائم کرنے کیلئے ہمہ وقت جدوجہد میں مصروف ہیںاوراس ملک میں اتحاد بین المذاہب اور اتحاد بین المسلمین کی داعی اور بانیان میں سے ہیں۔آخرمیں علامہ ساجد نقوی کا کہنا تھا کہ دہشتگردی بین الاقوامی مسئلہ ہے کے خاتمہ کےلئے تمام ممالک کو متحد ہو کر عملی اقدامات اٹھانے کے ضرورت ہے تاکہ دنیا بھر سے دہشتگردی کے خاتمہ کو ممکن بناتے ہوئے امن و امان کے قیام کوبرقرار رکھا جاسکے ۔قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے شہدا ءمساجدکی بلندی درجات اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی ۔