ابو کی اجازت۔۔۔۔۔موجودہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن بارے سیاسی صورت حال پر بہترین تجزیہ۔۔۔۔۔مخدوم زیدی کے قلم سے۔۔۔۔سلطان نیوز پر

0
92

ابو کی اجازت۔۔۔۔۔موجودہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ ن بارے سیاسی صورت حال پر بہترین تجزیہ۔۔۔۔۔مخدوم زیدی کے قلم سے۔۔۔۔سلطان نیوز پر
ابو کی اجازت
تحریر سید مخدوم زیدی

میرے ابا جی اگر حکم دیں تو میں ایک سیکنڈ میں عمران خان کی حکومت کو گرا دوں اور عمران خان کو جیل بھجوا دوں :بلاول زرداری
ہمارے قائد نواز شریف اگر اجازت دیں تو ہم ایک لمحہ میں حکومت گرادیں : نونو لیگی رہنماء
یہ بیانات کچھ دنوں سے سن سن کر کان پک گئے ہیں اگر مگر یہ وہ ایسے ویسے ! میں سمجھتا ہوں کہ اگر مندرجہ بالا افراد کے اختیار میں موجودہ حکومت کو گرانا ہوتا تو یہ کب کا ایسا کام کرچکے ہوتے کیوں کہ اس وقت سوتے جاگتے اٹھتے بیٹھے دونوں جماعتوں کی لیڈر شپ یہی سوچتی ہے یہی سازشیں کرتے رہتے ہیں حکومت گرانے کے فامولے ڈھونڈتے پھرتے ہیں اگر ان کے پاس ایک فیصد بھی کچھ ہوتا تو یہ کب کی حکومت حکومت کو گرا چکے ہوتے بات تو اس قدر آگے بڑھ چکی ہے ایک صاحب نے مذاکرات گروپ میں تو تو انتہا کر دی انہوں نے نہ صرف موجودہ حکومت کے خاتمہ کی بات کی بلکہ انہوں نے تو وزراء اور صدر پاکستان وزیرا عظم ،اسپیکر تک اور پنجاب میں حمزہ شہباز شریف کی وزارت اعلیٰ تک کا بتا دیا وہ فرماتے ہیں کہ زرداری اب حکومت کو گرانے کی تیاریاں مکمل کرچکے ہیں ان کے مطابق آئندہ کے وزیرا عظم بلوچستان سے اختر مینگل ہوں گے صدر منی لانڈر جناب آصف زرداری ہوں گے ،اسپیکر کا قرعہ دو میں سے کسی کے ایک نام نکل سکتا ہے جن میں خورشید شاہ اور طارق بشیر چیمہ ،وزیر خارجہ بلاول زرداری ،آٹھ وزراء کا تعلق پیپلز پارٹی سے اور دس وزراء نون لیگ سے ہوں گے ایم کیو ایم کو دو وزارتیں دی جائیں گی پنجاب میں وزیرا علیٰ حمزہ شہباز ہوں گے جب کہ پیپلز پارٹی کو چھ وزارتیں دی جائیں گی (پنجاب میں چھ ہی ممبران اسمبلی ہیں پیپلز پارٹی کے)ایسے ہی وہ صاحب فرماتے ہین کہ بلوچستان اسمبلی میں تبدیلی ہوگی جس میں قدوس بزنجو یا جان جمالی وزیرا علیٰ ہوں گے جب کہ سب سے بڑی اور مضحکہ خیز خبر یہ کہ آصف زرداری صدر پاکستان ہوں گے وہ بھائی یہ باتیں کرتے ہوئے بہت سے حقائق بھول گئے ،یہ بات ٹھیک ہے کہ وفاقی حکومت کے پاس زیادہ اکثریت نہیں ہے چند ووٹوں سے حکومت بنی ہوئی ہے کہتے ہیں کہ پیپلز پارٹی نے حکومت بننے میں تعاون کیا یقیناً کیا ہوگا کیوں کہ انہیں بھول تھی سابقہ حکومت کی وہ سمجھتے تھے اس بار بھی ان کو وہی پروٹوکول ملے گا کرپشن پر کوئی بات نہیں ہوگی کسی کو پکڑا جائے گا نہ چھیڑا جائے گا مگر ان کے سب اندازے غلط ثابت ہوئے اس میں اگر ایک بات شامل کر لی جائے تو شائد سب کو سمجھ آجائے وزارت عظمیٰ کے انتخاب میں کس نے کس کے ساتھ دھوکہ کیا؟سب جانتے ہیں پیپلز پارٹی نے اپنے مفادات کا تحفظ چاہا اور اسپیکر کے لیے ووٹ لے لیے مگر وزارت عظمیٰ کے لیے شہباز شریف کو ووٹ نہیں دیا بالفرض اگر یہ سب مل بھی جاتے پھر بھی ان کی حکومت بننے والی نہیں تھی آج اگر بلاول زرداری چیخ چلا رہے ہیں اگر وہ حکومت گرانے کی باتیں کررہے ہیں تو اس میں مضحکہ خیز باتیں یہی ہیں کہ میرے اس بھائی نے جو پوسٹ لگائی بریکنگ نیوز کے طور پرجس میں حکومت تبدیلی کا کہا گیا اس میں بلاول زرداری وزیر خارجہ ہیں تو ان کو اپنے ابو جی سے پوچھنے کی پھر کیا ضرورت ہے؟ابو جی تو خود صدر بن چکے ہیں اب حکومت گرانے کے لیے ابو جی کی اجازت کیوں ضروری ہے؟رہی بات نون لیگ کی تو شہباز شریف پوری پارٹی کو ماموں بنا چکا ہے جو کچھ اس نے حاصل کرنا تھا زبان بندی کے طور پر وہ کرچکے ہیں اس لیے نون لیگ ایسے بیان دینے سے گریز کرے کہ نواز شریف کہے تو ہم حکومت گرا سکتے ہیں جس تکلیف میں نون اور پی پی مبتلا ہے وہ ایک لمحہ بھی ضائع نہ کریں اور حکومت کو چلتا کر دیں نواز شریف جیل سے باہر آجائیں زرداری کی جان منی لانڈرنگ اور جعلی اکاؤنٹس سے چھٹ جائے اس لیے بلاول زرداری صاحب بڑھکیں مارنے سے حکومتیں نہیں گرتیں ،بدحواسی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ پی ٹی آئی نے سندھ میں توھڑی سی آگ جلائی ابھی آگ پوری طرح جل بھی نہیں پائی کہ چیخیں کراچی سے اسلام آباد میں سنائی دینے لگیں یہ تو شکر کریں اس چیف جسٹس کا جس کے بارے میں دونوں جماعتیں نجانے کیا کچھ نہیں کہتے رہے اس نے کل کی سماعت میں سانسیں درست کرنے کا موقع دیا ورنہ سانس پھول جانے سے پھیپھڑے پھٹ بھی سکتے تھے مانا کہ زرداری سیاست کی شطرنج کا بے تاج بادشاہ ہے مگر کبھی کبھی بادشاہ کو بھی شہہ مات ہو جاتی ہے ۔
سید مخدوم زیدی